Kaifi Azmi Biography

0
6

 

 

LIFE:

 

 

Kaifi Azmi the famous Urdu poet and lyricist, became born in 1925 in Mizwan, Azamgarh District, Uttar Pradesh. He died in Mumbai on May 10, 2002, fifteen months after recording for the Library of Congress in New Delhi. At the time of his demise he became one of the last closing representatives of the Progressive Writers Association.

 

Kaifi Azmi acquired many awards and tributes which include the Soviet Land Nehru Award and Sahitya Akademi Award. In 2000, he changed into given the primary Millennium Award by means of the Delhi Government and Urdu Academy.

He become venerated with the aid of “Padma Shri” maximum civilian award of Indian Government. The Maharashtra government honored him with the Dnyaneshwar award on him in 1998.

 

POETRY:

 

Sunaa Karo Merii Jaa.N In Se Un

Sunaa Karo Merii Jaa.N In Se Un Se Afasaane
Sab Ajanabii Hai.N Yahaa.N Kaun Kis Ko Pahachaane

Yahaa.N Se Jald Guzar Jaao Qaafile Vaalo.N
Hai.N Merii Pyaas Ke Phuu.Nke Hue Ye Viiraane

Merii Junuun-E-Parastish Se Ta.Ng Aa Gaye Log
Sunaa Hai Ba.Nd Kiye Jaa Rahe Hai.N But-Khaane

Jahaa.N Se Pichhale Pahar Ko_Ii Tashnaa-Kaam Uthaa
Vahii.N Pe To.De Hai.N Yaaro.N Ne Aaj Paimaane

Bahaar Aaye To Meraa Salaam Kah Denaa
Mujhe To Aaj Talab Kar Liyaa Hai Seharaa Ne

Sivaa Hai Huqm Ki “Kaifi” Ko Sang-Saar Karo
Masiihaa Baithe Hai.N Chhup Ke Kahaa.N Khudaa Jaane

….

Tum Itanaa Jo Muskuraa Rahe Ho

Tum Itanaa Jo Muskuraa Rahe Ho
Kyaa Gam Hai Jis Ko Chhupaa Rahe Ho

Aa.Nkho.N Me.N Namii Ha.Nsii Labo.N Par
Kyaa Haal Hai Kyaa Dikhaa Rahe Ho

Ban Jaaye.Nge Zahar Piite Piite
Ye Ashk Jo Piite Jaa Rahe Ho

Jin Zakhmo.N Ko Vaqt Bhar Chalaa Hai
Tum Kyo.N Unhe.N Chhe.De Jaa Rahe Ho

Rekhaao.N Kaa Khel Hai Muqaddar
Rekhaao.N Se Maat Khaa Rahe Ho

…..

میں ڈھونڈتا ہوں جسے وہ جہاں نہیں ملتا

میں ڈھونڈتا ہوں جسے وہ جہاں نہیں ملتا
نئی زمین نیا آسماں نہیں ملتا

نئی زمین نیا آسماں بھی مل جائے
نئے بشر کا کہیں کچھ نشاں نہیں ملتا

وہ تیغ مل گئی جس سے ہوا ہے قتل مرا
کسی کے ہاتھ کا اس پر نشاں نہیں ملتا

وہ میرا گاؤں ہے وہ میرے گاؤں کے چولھے
کہ جن میں شعلے تو شعلے دھواں نہیں ملتا

جو اک خدا نہیں ملتا تو اتنا ماتم کیوں
یہاں تو کوئی مرا ہم زباں نہیں ملتا

کھڑا ہوں کب سے میں چہروں کے ایک جنگل میں
تمہارے چہرے کا کچھ بھی یہاں نہیں ملتا

….

شور یوں ہی نہ پرندوں نے مچایا ہوگا

شور یوں ہی نہ پرندوں نے مچایا ہوگا
کوئی جنگل کی طرف شہر سے آیا ہوگا

پیڑ کے کاٹنے والوں کو یہ معلوم تو تھا
جسم جل جائیں گے جب سر پہ نہ سایہ ہوگا

بانیٔ جشن بہاراں نے یہ سوچا بھی نہیں
کس نے کانٹوں کو لہو اپنا پلایا ہوگا

بجلی کے تار پہ بیٹھا ہوا ہنستا پنچھی
سوچتا ہے کہ وہ جنگل تو پرایا ہوگا

اپنے جنگل سے جو گھبرا کے اڑے تھے پیاسے
ہر سراب ان کو سمندر نظر آیا ہوگا

…..

میں ڈھونڈتا ہوں جسے وہ جہاں نہیں ملتا

میں ڈھونڈتا ہوں جسے وہ جہاں نہیں ملتا
نئی زمین نیا آسماں نہیں ملتا

نئی زمین نیا آسماں بھی مل جائے
نئے بشر کا کہیں کچھ نشاں نہیں ملتا

وہ تیغ مل گئی جس سے ہوا ہے قتل مرا
کسی کے ہاتھ کا اس پر نشاں نہیں ملتا

وہ میرا گاؤں ہے وہ میرے گاؤں کے چولھے
کہ جن میں شعلے تو شعلے دھواں نہیں ملتا

جو اک خدا نہیں ملتا تو اتنا ماتم کیوں
یہاں تو کوئی مرا ہم زباں نہیں ملتا

کھڑا ہوں کب سے میں چہروں کے ایک جنگل میں
تمہارے چہرے کا کچھ بھی یہاں نہیں ملتا

…..

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here